کراچی اسٹاک معمولی تیزی کے بعد پھر مندی انڈیکس سے 82 پوائنٹس گر گئے

کراچی(بزنس رپورٹر)کراچی اسٹاک مارکیٹ منگل کے روز کی معمولی تیزی کے بعد گزشتہ روز ایک بار پھر مندی کی لپیٹ میں آگئی،کے ایس ای100انڈیکس میں82پوائنٹس کی کمی ریکارڈ کی گئی جس کے بعد انڈیکس ایک بار پھر33800پوائنٹس کی حد کھوتے ہو ئے 33718 کی سطح پر بند ہوا۔مارکیٹ میں مندی کے باعث سرمائے کے حجم میں 22ارب روپے سے زائد کی کمی رہی اور مارکیٹ کا مجموعی سرمایہ76کھرب81ارب روپے کی سطح سے گھٹ کر76کھرب58ارب روپے کی سطح پر آگیا،مارکیٹ میں مسلسل مندی کی لہر کے باعث حصص کی فروخت کا سلسلہ جاری رہا اور گزشتہ روز مارکیٹ سے 5کروڑ سے زائد حصص نکل گئے اور کاروباری حجم 21 کروڑ حصص کی سطح سے گر کر16کروڑ حصص کی سطح پر آگیا،ٹریڈنگ کے دوران آئل اینڈ گیس انڈیکس میں26پوائنٹس کا اضافہ جبکہ بینکنگ انڈیکس میں95پوائنٹس کی کمی دیکھی گئی،مجموعی طور پر 365کمپنیوں کے حصص کا لین دین ہوا جس میں سے 111کمپنیوں کے حصص کی قیمتوں میں اضافہ،234کمپنیوں کے حصص کی قیمتوں میں کمی اور20کمپنیوں کے حصص کی قیمتوں میں استحکام دیکھا گیا۔مارکیٹ ذرائع کے مطابق مندی کے باعث اس وقت غیر ملکی سرمایہ کاروں کی جانب سے پرافٹ ٹیکنگ دیکھی جارہی ہے جبکہ پشاور،شکارپور اور لاہور دھماکوں کے باعث بھی ملکی و غیر ملکی سرمایہ کار ایک بار پھر عدم اطمینان کا شکار دکھائی دے رہے ہیں،ٹریڈنگ کے دوران باٹا اور نیسلے کے حصص کی قیمتوں میں سب سے زیادہ اضافہ دیکھا گیا جہاں باٹا کے حصص کی قیمت180روپے اضافے سے 3780اور نیسلے کے حصص کی قیمت50روپے اضافے سے 10550روپے رہی جبکہ ایکسائیڈ کے حصص کی قیمت73روپے کمی سے 1394اور سیمنس پاکستان کے حصص کی قیمت46.51روپے کمی سے 1036.49روپے رہی،کے ایس ای30انڈیکس63پوائنٹس کمی سے 21943اور کے ایس ای آل شیئرز انڈیکس73پوائنٹس کمی سے 24274پوائنٹس پر بند ہوا۔

Print Friendly, PDF & Email